Monday, 31 March 2014

Janey Kis Ka Ho Baitha Hoon


سُدھ بُدھ اپنی کھو بیٹھا ہوں
جانے کس کا ہو بیٹھا ہوں

غیروں سے اب کیا ہے ڈرنا
سب اپنوں کو رو بیٹھا ہوں

میں تو نہیں ہوُں تھکنے والا
ساتھ ہو تُم جب، تو بیٹھا ہوں

تُم کو کیا دُنیا کی فکریں
میں ہوُں نا، میں جو بیٹھا ہوں

میرا تُم سے اب کیا جھگڑا
چھوڑو،جانے دو، بیٹھا ہوں

جو تھے ساتھی چلے گئے ہیں
میں بھی جانے کو بیٹھا ہوں

ہر جانب نفرت کی فصلیں
جانے میں کیا بو بیٹھا ہوں

جاتے جاتے تُم نے کہا تھا
تُم آؤگے، سو بیٹھا ہوں

بیچ چوراہے گندے کپڑے
ہائے صبا کیوں دھو بیٹھا ہوں...


Sudh Budh Apni Kho Baitha Hoon
Janey Kis Ka Ho Baitha Hoon

Gairon Se Ab Kia Hai Darna
Sab Apno Ko Ro Baitha Hoon

Mein Tou Nahi Hoon Thakney Wala
Sath Ho Tum Jab, Tou Baitha Hoon

Tum Ko Ki Dunya Ki Fikrein
Mein Hoon Na, Mein Jo Baitha Hoon

Mera Tum Se Ab Kia Jhagrra
Chorro, Janey Do, Baitha Hoon

Jo Thay Sathi Chaley Gaey Hein
Mein Bhi Janey Ko Baitha Hoon

Har Jaanib Nafrat Ki Faslein
Janey Mein Kia Ho Baitha Hoon

Jatey Jatey Tum Ne Kaha Tha
Tum Aaogey, So Baitha Hoon

Beech Chorahe Ganey Kaprrey
...Hy Saba Kiun Dho Baitha Hoon

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tuesday, 25 March 2014

Zehar Dey Do Issi Bahaney Se

Sahib Poetry Collection

جانکنی میں مریض ھستی ھے
مانگتا ھے دوا زمانے سے

چارہ سازو سنہری موقع ھے
..زہر دے دو اسی بہانے سے  


Jaa'nkani Mein Mareez-E-Hasti Hai
Maangta Hai Dawa Zamaney Se

Chaara'h Saazo Sunehri Moqa Hai
Zehar Dey Do Issi Bahaney Se..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Sunday, 23 March 2014

Teray Badan Se Teri Rooh Tak Nishaan Meray

Best Ghazals 2014
  
کہاں کہاں سے مٹائے گا، خوش گماں میرے
تیرے بدن سے تیری روح تک، نشاں میرے

کہیں بھی جا کے بسا لے تُو بھول کی بستی
محیط ہیں تیرے، یادوں کے آسماں میرے

اگرچہ فاصلہ دو چند کر لیا تو نے
رواں دواں ہیں تیری سمت کارواں میرے

میں جاؤں بھی تو کہاں، چھوڑ کر تیری گلیاں
تُو کر گیا سبھی رستے دھواں دھواں میرے

عبور ہوتے نہیں، روز طے تو کرتا ہوں
یہ ہجر فاصلے، یہ بحرِ بے کراں میرے

ہوا کے بیڑے کسی اور سمت بہتے ہیں
کھلے ہیں اور کسی سمت بادباں میرے

میں اپنے جذبوں کی شدت سے خوف کھاتا ہوں
کہ دشمنوں سے ہیں بڑھ کر، یہ مہرباں میرے

میں خواب زار کی کرتا تو ہوں چمن بندی
اجاڑ دے نہ کوئی آ کے گلستاں میرے

شگوفے آ گئے پلکوں پہ درد کے آخر
 .... .چھپا سکے نہ میرے راز، راز داں میرے


Kahan Kahan Se Mitaey Ga Khush Gumaan Meray
Teray Badan Se Teri Rooh Tak Nishaan Meray

Kaheen Bhi Jaa K Basaley Tou Bhool Ki Basti
Moheet Hein Teray, Yaadon K Aasmaan Meray

Agar Chay Faasla Dou Chund Kar Liya Tu Ne
Rawaan Dawaan Hein Teri Simt Kaarwaan Meray

Mein Jaon Bhi Tou Kahan, Chorr Kar Teri Galyaan
Tu Kar Gaya Sabhi Rastey Dhuwaan Dhuwaan Meray

Uboor Hotey Nahi, Roz Tou Tay Karta Hoon
Yeh Hijr Faasley, Yeh Hijr-E-Be-Karaan Meray

Hawa K Bairrey Kisi Aur Simt Behtey Hein
Khuley Hein Aur Kisi Simt Baadbaan Meray

Mein Apne Jazbon Ki Shiddat Se Khof Khata Hoon
Keh Dushmano Se Hein Barh Kar, Yeh Meharbaan Meray

Mein Khuwab Zaar Ki Karta Tou Hon Chaman Bandi
Ujaarr Dey Na Koi Aa K Gulistaan Meray

Shagoofey Aagaey Palkon Pe Dard K Aakhir
Chupaa Sakey Na Meray Raaz, Raazdaan Meray……


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 20 March 2014

Aisay Diya Kisi Ne Sandesa Bahaar Ka


Sandesa Bhaar Ka

زینے پہ رکھ گیا کوئی ٹہنی گلاب کی
..ایسے دیا کسی نے سندیسہ بہار کا
 

Zeenay Pe Rakh Gaya Koi Tehni Gulaab Ki
Aisay Diya Kisi Ne Sandesa Bahaar Ka..

 
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Jala K Taiz Hawa Mein Bujha Diya Hai Mujhe

Best Urdu Poetry

علاوہ اسکے محبت نے کیا دیا ہے مجھے
جلا کے تیز ہوا میں بجھا  دیا ہے مجھے

ستارہ بن کے سلگتا رہا ہوں جس کے لئے
اسی نے خاک میں آکر ملا دیا ہے مجھے

میں یاد رکھتا نہیں ہوں  میں اس کو یاد نہیں
میں بھول جاتا ہوں  اس نے بھلا دیا ہے مجھے

فنا کا آخری جھونکا گذر چکا ہے صاحب
....کہ لوح دل سے کسی نے  مٹا  دیا ہے مجھے




Elawa'h Iss K Mohabbat Ne Kiya Diya Hai Mujhe
Jala K Taiz Hawa Mein Bujha Diya Hai Mujhe

Sitaara Ban K Sulgta Raha Hoon Jis K Liye
Usi Ne Khaak Mein Aa Kar Mila Diya Hai Mujhe

Mein Yaad Rakhta Nahi Hoon Mein Us Ko Yaad Nahi
Mein Bhool Jata Hoon Us Ne Bhula Diya Hai Mujhe

Fana Ka Aakhri Jhonka Guzar Chuka Hai Sahib
K Loh-e-Dil Se Kisi Ne  Mitta Diya Hai Mujhe.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Monday, 17 March 2014

Mein Hosh Mein Tha Tou Phir Us Pe Mar Gaya Kaisay



  
میں ھوش میں تھا تو پھر اس پہ مر گیا کیسے
یہ زہر میرے لہو میں اتر گیا کیسے

کچھ اس کے دل میں لگا وٹ ضرور تھی
ورنہ وہ میرا ھاتھ دبا کر گزر گیا کیسے

ضرور اس کی توجہ کی رہبری ھوگی
نشے میں تھا تو اپنے ھی گھر گیا کیسے۔

جسے بھلا ئے ھوئے کئی سال ھو گئے کامل
..میں آج اس کی گلی میں سے گزر گیا کیسے۔

Mein Hosh Mein Tha Tou Phir Us Pe Mar Gaya Kaisay
Yeh Zehar Meary Lahoo Mein Utar Gaya Kaisay

Kuch Us K Dil Mein Lagawat Zaroor Thi Warna
Woh Mera Hath Daba Kar Guzar Gaya Kaisay

Zaroor Us Ki Tawajjo Ki Rehbari Hogi
Nashay Mein Tha Tou Apne He Ghar Gaya Kaisay

Jisay Bhulaey Huey Kai Saal Ho Gaey Kamil
Mein Aaj Uski Gali Se Guzar Gaya Kaisay. ....

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Sunday, 16 March 2014

Jo Dikhaie Dey Usay Khuwaab Kar


Best Urdu Poetry

نہ سماعتوں میں تپش گھلے
 نہ نظر کو وقف عذاب کر
جو سنائی دے اسے چپ سکھا
 جو دکھائی دے اسے خواب کر

ابھی منتشر نہ ہو اجنبی
 نہ وصال رت کے کرم جتا
جو تیری تلاش میں گم ہوے
 کبھی ان دنوں کا حساب کر

میرے صبر پر کوئی اجر کیوں
میری دوپہر پے یہ ابر کیوں
مجھے اوڑھنے دے اذیتیں
 میری عادتیں نہ خراب کر

کہیں آبلوں کے بھنور بجیں
کہیں دھوپ روپ بدن سجیں
کبھی دل کو تھل کا مزاج دے
کبھی چشم تر کو چناب کر

یہ ہجوم شہر ستم گراں
 نہ سنے گا تیری صدا کبھی
میری حسرتوں کو سخن سنا
 میری خواہشوں سے خطاب کر

یہ جلوس فصل بہار ہے
 تہی دست یار سجا اسے
کوئی اشک پھر سے شرر بنا
 ....کوئی زخم پھر سے گلاب کر

Na Sama’aton Mein Tapish Ghuley
Na Nazar Ko Waqf-E-Azaab Kar
Jo Sunai Day Usay Chup Sikha
Jo Dikhai Day Usay Khuwaab Kar

Abhi Muntashir Na Ho Ajnabi
Na Visaal Rutt K Karam Jata
Jo Teri Talash Mein Ghum Huey
Kabhi Un Dino Ka Hisaab Kar

Meray Sabar Par Koi Ajar Kiun
Meri Dopehar Par Yeh Abar Kiun
Mujhe Orrhney Day Aziyatein
Meri Aadatein Na Kharab Kar

Kaheen Aablo’n K Bha’nwar Bachein
Kaheen Dhoop Roop Badan Sajein
Kabhi Dil Ko Thal Ka Mijaaz Day
Kabhi Chashm-E-Tar Ko Chanaab Day

Yeh Hujoom-E-Shehr-E-Sitam Garaan
Na Suney Ga Teri Sada Kabhi
Meri Hasraton Ko Sukhan Suna
Meri Khuwahishon Se Khitaab Kar

Yeh Juloos-E-Fasl-E-Bahaar Hai
Tehi Dast-E-Yaar Saja Issay
Koi Ashk Phir Se Sharar Bana
Koi Zakhm Phir Se Gulaab Kar….

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Friday, 14 March 2014

Kabhi Koi Nahi Sunta Meray Alfaaz Ki Siski

Best Urdu Poetry

سبھی تعریف کرتے ہیں میری تحریر کی لیکن
..کبھی کوئی نہیں سنتا ، میرے الفاظ کی سسکی 

Sabhi Tareef Karte Hain Meri Tehreer Ki Lekin
Kabhi Koi Nahi Sunta , Meray Alfaaz Ki Siski..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 13 March 2014

Yeh Jab Utha Zameer Ki Awaaz Se Utha

Parwaaz Se Utha

مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا
پھر ہفت آسماں مری پرواز سے اٹھا

انسان ہو، کسی بھی صدی کا، کہیں کا ہو
یہ جب اٹھا ضمیر کی آواز سے اٹھا

صبحِ چمن میں ایک یہی آفتاب تھا
اس آدمی کی لاش کو اعزاز سے اٹھا

سو کرتَبوں سے لکّھا گیا ایک ایک لفظ
لیکن یہ جب اٹھا کسی اعجاز سے اٹھا

اے شہسوارِ حُسن! یہ دل ہے یہ میرا دل
یہ تیری سر زمیں ہے، قدم ناز سے اٹھا

میں پوچھ لوں کہ کیا ہے مرا جبر و اختیار
یا رب  یہ مسئلہ کبھی آغاز سے اٹھا

وہ ابر شبنمی تھا کہ نہلا گیا وجود
میں خواب دیکھتا ہوا الفاظ سے اٹھا

شاعر کی آنکھ کا وہ ستارہ ہوا علیم
 ..... قامت میں جو قیامتی انداز سے اٹھا 

Mitti Tha Mein Khameer Teray Naaz Se Utha
Phir Haft Aasmaa'n Meri Parwaaz Se Utha

Insaan Ho, Kisi Bhi Sadi Ka, Kaheen Ka Ho
Yeh Jab Utha Zameer Ki Aawaaz Se Utha

Subah-E-Chaman Mein Aik Yehi Aaftaab Tha
Iss Aadmi Ki Laash Ko Aizaaz Se Utha

So Kartabo'n Se Likha Gaya Aik Aik Lafz
Lekin Yeh Jab Utha Kisi Ejaaz Se Utha

Ay Sheh-Sawaar-E-Husn Yeh Dil Hai Yeh Mera Dil
Yeh Teri Sar-Zameen Hai , Qadam Naaz Se Utha

Mein Pooch Loon K Kia Hai Mera Jabr-O-Ikhtiyar
Ya Rab Yeh Mas'ala Kabhi Aaghaaz Se Utha

Woh Abr Shabnami Tha K Nehla Gaya Wujood
Mein Khuwaab Dekhta Huwa Alfaaz Se Utha

Shaa'ir Ki Aankh Ka Woh Sitara Huwa Aleem
Qaamat Mein Jo Qayamti Andaaz Se Utha.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tuesday, 11 March 2014

Umar Guzri Hai Iss Qadar Tanha

Apne Saey Se

اپنے ساۓ سے چونک جاتے ہیں
...عمر گزری ہے اس قدر تنہا 

Apne Saey Se Chonk Jatey Hein
   Umar Guzri Hai Iss Qadar Tanha....

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 6 March 2014

Tera Khayal Tha Jis Ko Faqat Sada Di Hai

Sahib Poetry Collection

دھنک نچوڑ کے خورشید میں ملا دی ہے
برہنہ دھوپ کو یوں اک نئ قبا دی ہے

وە خوش فریب مری عمر روز چاٹتا ہے
اُسی نے آتشِ پنہاں کو پھر ہوا دی ہے

بس ایک خواب لیۓ دربدر پھرا برسوں
بس ایک خواب کے نشے میں سب بِتا دی ہے

وە جس سے جیب و گریباں کی ساری رونق تھی
وە ریزگاری کہیں راە میں گنوا دی ہے

کوئ سفر ہے نہ رستہ نہ کوئ منزل ہے
فصیل کس نے مرے گرد یہ اُٹھا دی ہے

جو میرے ہاتھ نہ آیا کبھی،اُسی کیلۓ
درونِ شہرِ ہوا زندگی بنا دی ہے

یہ کوئ رات نہیں ہے نہ یہ اندھیرا ہے
بس ایک چادرِغم دشت میں بچھا دی ہے

ہمارے سامنے محبوب زندگی کب تھی
 .....ترا خیال تھا جس کو فقط صدا دی ہے

Dhanak Nichorr K Khursheed Mein Mila Di Hai
Barhana Dhoop Ko Yun Ik Nai Qaba Di Hai

Woh Khush Faraib Meri Umar Roz Chaat'ta Hai
Usi Ne Aatish-E-Pinhaan Ko Phir Hawa Di Hai

Bus Ik Khuwab Liye Darbadar Phira Barson
Bus Aik Khuwab K Nashey Mein Sab Bita Di Hai

Woh Jis Se Jaib-O-Garaibaan Ki Sari Ronaq Thi
Woh Raigaari Kaheen Raah Mein Ganwadi Hai

Koi Safar Hai Na Rasta Na Koi Manzil Hai
Faseel Kis Ne Merey Gird Yeh Utha Di Hai

Jo Merey Hath Na Aaya Kabhi, Usi K Liye
Daron-E-Shehr-E-Hawa Zindagi Bana Di Hai

Yeh Koi Raat Nahi Hai Na Yeh Andhera Hai
Bus Aik Chadar-E-Gham Dasht Mein Bicha Di Hai

Hamarey Samne Mehboob Zindagi Kab Thi
Tera Khayal Tha Jis Ko Faqat Sada Di Hai ........ .

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Wednesday, 5 March 2014

Kuch Shehar Ki Galyaan Bhi Pur-Asraar Bohat Hein

Pur Asraar Bohat

کچھ لوگ بھی وہموں میں گرِفتار بہت ہیں
کچھ شہر کی گلیاں  بھی پُراسرار بہت ہیں

ہے کون، اُترتا ہے وہاں جِسکے لیے چاند
کہنے کو تو چہرے پسِ دیوار بہت ہیں

ہونٹوں پہ سُلگتے ہوئے اِنکار پہ مَت جا
پلکوں سے پَرے بِھیگتے  اقرار بہت ہیں

یہ دُھوپ کی سازش ہے کہ موسم کی شرارت
سائے ہیں وہاں کم ، جہاں اشجار بہت ہیں

بے حرفِ طَلب اِنکو عطا کر کبھی خُود سے
وہ یُوں کہ سوالی تِرے خُوددار بہت ہیں

تُم مُنصِف و عادل ہی سہی شہر میں، لیکن
کیوں خُون کے چِھینٹے سرِ دستار بہت ہیں

اے ہجر کی بستی تُو سلامت رہے، لیکن
سُنسان تیرے کوچہ و بازار بہت ہیں

محسنؔ ہمیں ضِد ہے کہ ہو اندازِ بیاں اور
.....ہم لوگ بھی غالب کے طرفدار بہت ہیں

Kuch Log Bhi Wehmon Mein Giraftaar Bohat Hein
Kuch Shehar Ki Galyaan Bhi Pur-Asraar Bohat Hein

Hai Kon , Utarta Hai Wahan Jis K Liye Chaand
Kehne Ko Tou Chehrey Pas-E-Diwaar Bohat Hein

Honton Pe Sulagtey Huey Inkaar Pe Mat Jaa
Palko’n Se Parey Bheegtey Iqraar Bohat Hein

Yeh Dhoop Ki Sazish Hai Ke’h Mosam Ki Shararat
Saey Hai Wahan Kam,  Jahan Ashjaar Bohat Hein

Be Harf Talab Un Ko Ataa Kar Kabhi Khud Se
Woh Yun K Sawali Teray Khuddaar Bohat Hein

Tum Munsif-O-Adil He Sahi Shehar Mein Lekin
Kiun Khoon Chhee’ntey  Sar-E-Dastaar Bohat Hein

Ay Hijar Ki Basti  Tu Salamat Rahey Lekin
Sunsaan Terey Koocha-O-Bazaar Bohat Hein

Mohsin Hamein Zid Hai Keh Ho Andaz-E-Bayaan Aur
Hum Log Bhi Galib K Tarafdaar Bohat Hein…….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Monday, 3 March 2014

Azal Se Shehar Mein Khaali Makaan Thay Hum Jaisay

Khaali Makaan Thay

خود اپنے سائے پہ بار گراں تھے ہم جیسے
کھلا کہ شہر میں بس رائیگاں تھے ہم جیسے

ہمیں سے شب کے اندھیرے لپٹ کے سوئے تھے
کھلی جو دھوپ تو خود بے اماں تھے ہم جیسے

زمیں کے تن پہ ہمارے لہو کی چادر تھی
خود اپنی ذات میں اک آسماں تھے ہم جیسے

ہمارے پاوں تلے موج مارتا تھا فرات
یہ اور بات کہ تشنہ دہاں تھے ہم جیسے

یہ تاج و تخت رہے اپنی ٹھوکروں میں سدا
کہ سرفراز ِ صلیب و سناں تھے ہم جیسے

ہمارے دل میں اترتی تھیں آفتیں محسن
...ازل سے شہر میں خالی مکاں تھے ہم جیسے




Khud Apne Saey Pe Bar-E-Giraan Thay Hum Jaisay
Khula Ke'h Shehar Mein Bus Raaigaan Thay Hum Jaisay

Hami Se Shab K Andheray Lipat K Soey Thay
Khuli Jo Dhoop Tou Khud Be-Imaan Thay Hum Jaisay

Zameen K Tan Pe Hamarey Lahoo Ki Chadar Thi
Khud Apni Zaat Mein Ik Aasmaan Thay Hum Jaisay

Hamarey Paaon Taley Mouj Marta Tha Furaat
Yeh Aur Baat Ke'h Tishna Dehaan Thay Hum Jaisay

Yeh Takht-O-Taaj Rahey Apni Thokaron Mein Sada
Ke'h Sarfaraz-E- Saleeb-O-Sanaa'n Thay Hum Jaisay


Hamarey Dil Mein Utarti Thi Aafatein Mohsin

Azal Se Shehar Mein Khali Makaan Thay Hum Jaisay...

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It