Friday, 28 February 2014

Hamarey Hissay Mein Uzar Aaey Jawaaz Aaey Usool Aaey

Azaab Rut Thi

درختِ جاں پر عذاب رُت تھی
 نہ برگ جاگے نہ پھول آئے 
بہار وادی سے جتنے پنچھی
،ادھر کو آئے ملول آئے

نشاطِ منزل نہیں تو ان کو
 کوئی سا اجرِ سفر ہی دے دو
وہ رہ نوردِ رہِ جنوں جو
، پہن کے راہوں کی دھول آئے

وہ ساری خوشیاں جو اس نے چاہیں
 اُٹھا کے جھولی میں اپنی رکھ لیں
                    ہمارے حصّے میں عذر آئے
، جواز آئے ، اصول آئے

اب ایسے قصّے سے فائدہ کیا
 کہ کون کتنا وفا نِگر تھا
جب اُس کی محفل سے آگئے 
،اور ساری باتیں ہیں بھول آئے

وفا کی نگری لُٹی تو اس کے
 اثاثوں کا بھی حساب ٹھہرا
کسی کے حصّے میں زخم آئے
، کسی کے حصّے میں پھول آئے

بنامِ فصلِ بہار 
آزر
  وہ زرد پتے ہی معتبر تھے
جو ہنس کے رزقِ خزاں ہوئے ہیں
،..... جو سبز شاخوں پہ جھول آئے

Darakht-E-Jaan Pe Azaab Rut Thi
Na Burg Jaagay Na Phool Aaey
Bahaar Waadi Se Jitney Panchi
Idhar Ko Aaey Malool Aaey ,

Nishat-E-Manzil Nahi Tou UnKo
Koi Sa  Ajr-E-Safar He Dey  Do
Woh Reh Norid-E-Reh Junoo Jo
Pehan K Raahon Ki Dhool Aaey ,

Woh Sari Khushyan Jo Us Ne Chahi
Utha K Jholi Mein Apni Rakh Leei’n
Hamarey Hissay Mein Uzar Aaey
Jawaaz Aaey , Usool Aaey ,

Ab Aisay Qissay Se Faida'h Kia
Ke'h Kon Kitna Wafa Nagar Tha
Jab Us Ki Mehfil Se Aagaey
Aur Saari Batein Hein Bhool Aaey ,

Wafa Ki Nagri Luti Tou Us K
Asaaso'n Ka Bhi Hisaab Thehra
Kisi K Hissey Mein Zakhm Aaey
Kisi K Hissey Mein Phool Aaey ,

Ba-Naam-E-Fasl-E-Bahaar Aazir
Woh Zard Pattay He Moatabar Thay
Jo Huns K Rizq-E-Khizaan Huey Hein
Jo Sabz Shakho'n Pe Jhool Aaey........ ,

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Bharay Shehar Mein Wohi Aik Shakhs Hai Be Khabar Meray Haal Se

Be Khabar Mere

    جو بلند بام ِ حروف سے ، جو پرے ہے دشت ِ خیال سے
 وہ کبھی کبھی مجھے جھانکتا ہے غزل کے شہر ِ جمال سے

میں کروں جو سجدہ تو کس طرف کہ مرا وہ قبلہء دید تو
کبھی شرق و غرب سے جلوہ گر ہے ،کبھی جنوب و شمال سے

ابھی رات باقی ہے قصہ خواں ، وہی قصہ پھر سے بیان کر
جو رقم ہوا تھا کرن کرن ، کسی چاند رخ کے وصال سے

میں جہاں بھی تھا ترے حسن کے کسی زاویے کا اسیر تھا
 میں تو ایک پل بھی نکل سکا نہ کبھی محیط ِ جمال سے

کبھی خود کو تجھ میں سمو کے میں لکھوں چاہتوں کے مکالمے
کبھی نام اپنا نکال لوں ترے نام کی کسی فال سے

جو ترے خیال کو جاوداں ، جو مرے سُخن کو اَمر کرے
وہی ایک لمحہ تراش لوں ترے ہجر کے مہ و سال سے

مری عمر ساری گزر گئی ہے رشید جس کے طواف میں
.... بھرے شہر میں وہی ایک شخص ہے بےخبر مرے حال سے



Jo Buland Baam-E-Huroof Se, Jo Paray Hai Dasht-E-Khayal Se
Woh Kabhi Kabhi Mujhe Jhankta Hai Ghazal K Shehr-E-Jamal Se

Mein Karon Tou Sajda Kis Taraf Keh Mera Woh Qibla-E-Deed Tou
Kabhi Shirq-O-Girb Se Jalwa Gar Hai, Kabhi Junoob-O-Shumaal Se

Abhi Raat Baqi Hai Qissa Khuwaa'n, Wohi Qissa Phir Se Bayaan Kar
Jo Raqam Hua Tha Kiran Kiran, Kisi Chaand Rukh K Visaal Se

Mein Jahan Bhi Tha Teray Husn K Kisi Zaaviye Ka Aseer Tha
Mein Tou Aik Pal Bhi Nikal Saka Na Kabhi Moheet-E-Jamal Se

Kabhi Tujhko Khud Mein Samo'n K Mein Likhon Chahaton K Mukalmay
Kabhi Naam Apna Nikaal Koon Teray Naam Ki Kisi Faal Se

Jo Teray Khayal Ko Jawadaa'n, Jo Meray Sukhan Ko Amar Karey
Wahi Aik Lamha Taraash Loon Teray Hijar K M    Saal Se

Meri Umar Saari Guzar Gai Hai Rasheed Jis K Tawaaf Mein
Bharay Shehar Mein Wohi Aik Shakhs Hai Be Khabar Meray Haal Se...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 27 February 2014

Kheench Lati Hai Hamein Teri Mohabbat Warna

Teri Mohabbat Warna

کم سخن ہیں پسِ اظہار ملے ہیں تجھ سے
ملنا یہ ہے تو کئی بار ملے ہیں تجھ سے

جانتے ہیں کہ نہیں سہل محبت کرنا
یہ تو اک ضد میں مرے یار ملے ہیں تجھ سے

تیز رفتارئ دنیا کہاں مہلت دے گی
 ہم سرِ گرمی بازار ملے ہیں تجھ سے

کبھی لاتے تھے ترے واسطے جو شاخِ گلاب
وہ بھی اب کھینچ کے تلوار ملے ہیں تجھ سے

تیرے ملنے سے انہیں روک سکا ہے کوئی
ملنے والے تو سرِ دار ملے ہیں تجھ سے

کھینچ لاتی ہے ہمیں تیری محبت ورنہ
..... آخری بار کئی بار ملے ہیں تجھ سے 

Kam Sukhan Hein Pas-E-Izhaar Miley Hein Tujh Se
Milna Yeh Hai Tou Kaiee Baar Miley Hein  Tujh Se

Jantey Hein Ke'h Nahi Sehal Mohabbat Karna
Yeh Tou Ik Zid Mein Meray Yaar Miley Hein Tujh Se

Taiz Raftariy-E-Dunya Kahan Mohlat Day Gi
Hum Sar-E-Garmiy-E-Bazaar Miley Hein Tujh Se

Kabhi Latey Thay Teray Wastey Jo Shkah-E-Gulaab
Woh Bhi Ab Kheench K Talwaar Miley Hein Tujh Se

Teray Milney Se Uneh Rok Saka Hai Koi
Milney Waley Tou Sar-E-Daar Miley Hein Tujh Se

Kheench Lati Hai Hamein Teri Mohabbat Warna
Aakhri Baar Kaiee Baar  Miley Hein Tujh Se.......

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Wednesday, 26 February 2014

Mera Nahi Tou Woh Apna He Kuch Khayal Karey

Kuch Khayal Karay

    مرا نہیں تو وہ اپنا ھی کچھ خیال کرے
    اُسے کہو کہ تعلق کو پھر بحال کرے

    ملے تو اتنی رعایت عطا کرے مجھ کو
    مرے جواب کو سُن کر کوئی سوال کرے

    کلام کر کہ مرے لفظ کو سہولت ھو
    ترا سکوت مری گفتگو محال کرے

    نۂ گزرے وقت کا پوچھے نہ آنے والے کا
    کوئی سوال کرے بھی تو حسب حال کرے

    وہ ھونٹ ھوں کہ تبسم، سکوت ھو کہ سُخن
   ترا جمال ھر اک رنگ میں کمال کرے

    بلندیوں پہ کہاں تک تجھے تلاش کروں
    ھر ایک سانس پہ عمر ِرواں زوال کرے

    نگاہِ یار نہ ھو تو نکھر نہیں پاتا
کوئی جمال کی جتنی بھی دیکھ بھال کرے

    میں اُس کا پھول ھوں نیر سو اُس پہ چھوڑ دیا
   .....وہ گیسوؤں میں سجائے کہ پائمال کرے

Mera Nahi Tou Woh Apna He Kuch Khayal Karay
Usay Kaho Keh Ta'alluq Ko Phir Bahaal Karay

Milay Tou Itni Riayat  Ataa Karay Mujh Ko
Merey Jawab Ko Sun Kar Koi Sawaal Karay

Kalaam Kar, Ke'h Meray Lafz Ko Sahoolat Ho
Tera Sakoot Meri Guftagoo Muhaal Karay

Na Guzrey Waqt Ka Poochey Na Aaney Waley Ka
Koi Sawaal Karey Bhi Tou Hasb-E-Haal Karay

Woh Hont Hon K Tabassum, Sakoot Ho Ke'h Sukhan
Tera Jamal Har Ik Rung Mein Kamaal Karay

Bulandiyon Pe Kahan Tak Tujhe Talash Karon
Har Aik Saans Pe Umr-E-Rawaan Zawaal Karay

Nigah-E-Yaar Na Ho Tou Phir Nikhar Nahi Pata
Koi Jamaal Ki Jitni Bhi Daikh Bhaal Karay

Mein Us Ka Phool Hoon Nayyar So Us Pe Chorr Diya
Woh Gaisoowon Mein Sajaey Ke'h Paaiemaal Karay.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tuesday, 25 February 2014

Tujhey Muft Mein Jo Mil Gaey Hum

Qadar Na Karay

تجھے مفت میں جو مل گئے ہم
..تو قدر نہ کرے یہ تیرا حق بنتا ہے   

Tujhey Muft Mein Jo Mil Gaey Hum
Tu Qadar Na Karey Yeh Tera Haq Banta Hai..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Woh Rut Bhi Aaie K Mein Phool Ki Sahaili Hui

Phool Ki Sahaili

وہ رُت بھی آئی کہ میں پھول کی سہیلی ہوئی
مہک میں چمپا کلی، روپ میں چنبیلی ہوئی

وہ سرد رات کی برکھا سے کیوں نہ پیار کروں
یہ رُت تو ہے مرے بچپن کی ساتھ کھیلی ہوئی

زمیں پہ پائوں نہیں پڑ رہے تکبر سے
نگارِ غم کوئی دُلہن نئی نویلی ہوئی

وہ چاند بن کے مرے ساتھ ساتھ چلتا رہا
میں اس کے ہجر کی راتوں میں کب اکیلی ہوئی

جو حرفِ سادہ کی صورت ہمیشہ لکھی گئی
.....وہ لڑکی تیرے لیے کس طرح پہیلی ہوئی

Woh Rut Bhi Aaie K Mein Phool Ki Sahaili Hui
Mehak Mein Champa Kali, Roop Mein Chanbeli Hui

Woh Sard Raat Ki Barkha Se Kiun Na Piyar Karon
Yeh Rut Tou Hai Merey Bachpan K Sath Khaili Hui

Zameen Pe Paaon Nahi Parr Rahey Takabbur Se
Nigar-E-Gham Koi Dulhan Nai Nawaili Hui

Woh Chaand Ban K Merey Sath Sath Chalta Raha
Mein Us K Hijar Ki Raton Mein Kab Akaili Hui

Jo Harf Sada'h Ki Soorat Hamesha Likhi Gai
Woh Larrki Teray Liye Kis Tarha Paheli Hui...

 .
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Lag Raha Hai Jaan Laiva Marhala Aaega Ab

Jaan Laiva Marhala

لگ رہا ہے جان لیوا مرحلہ آئے گا اب
.. آج کل اتنی جو ہم پہ مہرباں ہے زندگی

Lag Raha Hai Jaan Laiva Marhala Aaega Ab
  Aaj Kal Itni Jo Hum Pe Meharbaan Hai Zindagi..  

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Friday, 21 February 2014

Wohi Qissay Hein Wohi Baat Purani Apni

Raam Kahani Apni

وہی قصے ہیں وہی بات پرانی اپنی
کون سنتا ہے بھلا رام کہانی اپنی

ہر ستمگر کو یہ ہمدرد سمجھ لیتی ہے
کتنی خوش فہم ہے کمبخت جوانی اپنی

روز ملتے ہیں دریچے میں نئے پھول کھلے
چھوڑ جاتا ہے کوئی روز نشانی اپنی

تجھ سے بچھڑے ہیں تو پایا ہے بیاباں کا سکوت
ورنہ  دریاؤں  سے ملتی تھی  روانی  اپنی

قحطِ پندار کا موسم ہے سنہرے لوگو
کچھ  تیز کرو اب کے گرانی  اپنی

دشمنوں سے ہی اب غمِ دل کا مداوا مانگیں
دوستوں نے تو کوئی بات نہ مانی اپنی

آج پھر چاند افق پر نہیں ابھرا محسن
آج پھر رات نہ گزرے گی سہانی اپنی......


Wohi Qissay Hein Wohi Baat Purani Apni
Kon Suntan Hai Bhala Raam Kahani Apni

Har Sitamgar Ko Yeh Hamdard Samajh Leti Hai
Kitni Khush Feham Hai Kambakht Jawani Apni

Roz Miltey Hein Dareechay Mein Naey Phool Khiley
Chorr Jata Hai Koi Roz Nishani Apni

Tujhse Bichrrey Hein Tou Paya Hai Bayabaa’n Ka Sakoot
Warna Daryao’n Se Milti Thi Rawani Apni

Qeht-E-Pindaar Ka Mosam Hai Sunehray Logo
Kuch Taiz Karo Ab K Giraani Apni

Dushmano Se He Ab  Gham-E-Dil Ka Madava Mangey
Doston Ne Tou Koi Baat Na Maani Apni

Aaj Phir Chaand Ufaq Par Nahi Ubhra Mohsin
Aaj Phir Raat Na Guzrey Gi Suhani Apni..........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 20 February 2014

Gar Jeet Gaey Tou Kia Kehna Haarey Bhi Tou Baazi Maat Nahi

Baazi Maat Nahi

کب یاد میں تیرا ساتھ نہیں
 کب ہات میں تیرا ہات نہیں
صد شکر کہ اپنی راتوں میں
 ،اب ہجر کی کوئی رات نہیں

مشکل ہے اگر حالات وہاں
 دل بیچ آئیں جاں دے آئیں
دل والو کوچہء جاناں میں‌
، کیا ایسے بھی حالات نہیں

جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا
 وہ شان سلامت رہتی ہے
یہ جان توآنی جانی ہے
، اس جاں کی تو کوئی بات نہیں

میدانِ وفا دربار نہیں
 یاں‌ نام و نسب کی پوچھ کہاں
عاشق تو کسی کا نام نہیں
، کچھ عشق کسی کی ذات نہیں

گر بازی عشق کی بازی ہے
 جو چاہو لگا دو ڈر کیسا
گرجیت گئے تو کیا کہنا
......... ہارے بھی تو بازی مات نہیں

Kab Yaad Mein Tera Saath Nahi, 
Kab Haath Mein Tera Haath Nahi
Sad Shukar K Apni Raaton Mein
Ab Hijar ki Koi Raat Nahi,

Mushkil Hein Agar Halaat Wahaan
Dil Baich Aaen Jaa'n De Aaen
Dil Waalo Kocha-e-Janaa'n Mein
Kiya Aisey Bhi Halaat Nahi,

Jis Dhaj Se Koi Maqtal Mein Gaya
Wo Shaan Salamat Rehti Hai
Ye Jaan Tou Aani Jaani Hai
Iss Jaa'n Ki Tou Koi Baat Nahi,

Maidan-e-Wafa Darbaar Nahi
Yaa'n Naam-o-Nasab Ki Pooch Kahan
Aashiq Tou Kisi Ka Naam Nahi
Kuch Ishq Kisi Ki Zaat Nahi,

Gar Baazi Ishq Ki Baazi Hai
Jo Chaho Laga Do Dar Kaisa
Gar Jeet Gaey Tou Kiya Kehna
Haarey Bhi Tou Baazi Maat Nahi.......

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tuesday, 18 February 2014

Milay Hein Baad Muddat K Bala K Sard Hein Lehjay

Sard Hein Lehjay

ملے ہیں بعد مدت کے، بلا کے سرد ہیں لہجے
کہ جلنا بھی نہیں‌ممکن، پگھلنا بھی نہیں ممکن

تعلق ٹوٹ جانے سے، امیدیں ٹوٹ جاتی ہیں
دلوں میں حسرتیں لے کر، بہلنا بھی نہیں‌ممکن

بہت ناکامیاں لے کر، ہوئے ہیں خاک کے قیدی
چلو اب آج سے گھر سے، نکلنا بھی نہیں ممکن

اسے اتنا نہ سوچا کر، تیری عادت نہ بن جائے
....پھر ایسی عادتیں محسن بدلنا بھی نہیں ممکن

Miley Hein Baad Muddat K , Bala K Sard Hein Lehjay
K Jalna Bhi Nahi Mumkin, Pighalna Bhi Nahi Mumkin

Ta’alluq Toot Janey Se , Umeedein Toot Jati Hein
Dilo’n Mein Hasratein Lay Kar, Behalna Bhi Nahi Mumkin

Bohat Nakamiyan Lay Kar , Hoey Hein Khaak K Qaidi
Chalo Ab Aaj Se Ghar Se, Nikalna Bhi Nahi Mumkin

Usay Itna Na Socha Kar, Teri Aadat Na Bun Jaey
Phir Aisi Aadatei’n Mohsin , Badalna Bhi Nahi Mumkin..


  Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Monday, 17 February 2014

Hum Wahan Se Nikley Tou Khuwahishein Jala Aaey


Kashtiyan Jala Aaey

کشتیاں جلانا تو رسم اک پرانی تھی
..ہم وہاں سے نکلے تو خواہشیں جلا آئے  

Kashtiyan Jalana Tou Rasam Ik Purani Thi
Hum Wahan Se Nikley Tou Khuwahishein Jala Aaey.

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Saturday, 15 February 2014

Iss Liye Woh Shehzadi Aaj Tak Kanwari Hai

Shehzadi Poetry

زُلف و رُخ کے ساۓ میں زندگی گزاری ہے
دُھوپ بھی ہماری ہے چھاؤں بھی ہماری ہے

غم گُسار  چہروں  پر اعتبا ر مت  کرنا
شہر میں سیاست کے دوست بھی شکاری ہے

موڑ لینے والی ہے ، زندگی کوئی شاید
اب کے پھر ہواؤں میں ایک بیقراری ہے

حال خوں میں ڈوبا ہے کل نہ جانے کیا ہوگا
اب یہ  خوفِ مستقبل  ذہن ذہن  طاری ہے

میرے ہی بزرگوں نے سربلندیاں بخشیں
میرے ہی قبیلے پر مشق سنگ باری ہے

اک عجیب ٹھنڈک ہے اُس کے نرم لہجے میں
لفظ لفظ  شبنم  ہے بات بات  پیاری ہے

کچھ تو پائیں گے اُس کی قربتوں کا خمیازہ
دل تو ہو چکے ٹکڑے اب سروں کی باری ہے

باپ بوجھ  ڈھوتا  تھا کیا جہیز دے  پاتا
اس لئے وہ  شہزادی آج  تک کنواری ہے

کہہ دو میر و غالب سے ہم بھی شعر کہتے ہیں
وہ صدی  تمھاری تھی  یہ صدی ہماری  ہے

کربلا نہیں لیکن جھوٹ اور صداقت میں
کل بھی جنگ جاری تھی آج بھی جنگ جاری ہے

گاؤں میں محبت کی رسم ہے ابھی منظر
 .....شہر میں ہمارے تو  جو بھی ہے مداری ہے

Zulf-o-Rukh K Saaey Mein Zindagi Guzari Hai
Dhoop Bhi Hamri Hai Chhaou’n Bhi Hamri Hai

Gham Gusaar Chehron Par Aitbaar Mat Karna
Shehar Mein Siyasat K Dost Bhi Shikaari Hai

Morr Lainey Wali Hai Zindagi Koi Shayad
Ab K Phir Hawaoun Mein Aik Beqarari Hai

Haal Khoo'n Mein Dooba Hai Kal Na Janey Kia Hoga
Ab Yeh Khof-e-Mustaqbil Zehan Zehan Taari Hai

Meray He Buzargo’n Ne Sar Bulandiyan Bakhshi’n
Meray He Qabeelay Par Mashq-e-Sang-e-Baari Hai

Ik Ajeeb Thandak Hai Us K Narm Lehjay Mein
Lafz Lafz Shabnum Hai Baat Baat Piyari Hai

Kuch Tou Paein Gay Us Ki Qurbaton Ka Khumyaza’h
Dil Tou Ho Chukey Tukrrey Ab Saro’n Ki Baari Hai

Baap Bojh Dhota Tha Kia Jahaiz De Paata
Iss Liye Woh Shehzadi Aaj Tak Kanwari Hai

Keh Do Meer-o-Galib Se Hum Bhi She’ar Kehtay Hein
Woh Sadi Tumhari Thi Yeh Sadi Hamari Hai

Karbala Nahi Lekin Jhoot Aur Sadaqat Mein
Kal Bhi Jung Jaari Thi Aaj Bhi Jung Jaari Hai

Gaao’n Mein Mohabbat Ki Rasm Hai Abhi Manzar
Shehar Mein Hamarey Tou  Jo Bhi Hai Madaari Hai….


  Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Friday, 14 February 2014

Woh Dushman Bhi Nahi Kartey Jo Meray Yaar Kartey Hein

Andheray Ab Nahi

اندھیرے اب نہیں ڈستے اجالے وار کرتے ہیں
.وہ دشمن بھی نہیں کرتے جو میرے یار کرتے ہیں 

Andheray Ab Nahi Dastey Ujaley Waar Kartey Hein
Woh Dushman Bhi Nahi Kartey Jo Meray Yaar Kartey Hein


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It