Friday, 31 January 2014

Tanhaieyon Ki Shaam Zara Aankh Tou Mila

Zara Aankh Tou

اے حُسنِ لالہ فام ذرا آنکھ تو مِلا
خالی پڑے ہیں جام ذرا آنکھ تو مِلا

کہتے ہیں آنکھ آنکھ سے مِلنا ہے بندگی
دُنیا کے چھوڑ کام ذرا آنکھ تو مِلا

کیا وہ نہ آج آئیں گے تاروں کے ساتھ ساتھ؟
تنہائیوں کی شام ذرا آنکھ تو مِلا

ساقی مُجھے بھی چاہیئے اِک جامِ آرزو
کِتنے لگیں گے دام ذرا آنکھ تو مِلا

یہ جام، یہ سبُو، یہ تصوُر کی چاندنی
ساقی! کہاں مدام ذرا آنکھ تو مِلا

آ جائے گا یقین خُدا سب کو یک بہ یک
لے کر خُدا کا نام ذرا آنکھ تو مِلا

پامال ہو نہ جائے سِتاروں کی آبرو
اے میرے خوش خرام ذرا آنکھ تو مِلا

ہیں راہِ کہکشاں میں اَزل سے کھڑے ہوئے
 ...... ساغرؔ تیرے غُلام ذرا آنکھ تو مِلا

Ay Husn-e-Lala  Faam Zara Aankh Tou Mila
Khaali Paday Hein Jaam Zara Aankh Tou Mila

Kehte Hein Aankh Aankh Se Milna Hai Bandagi
Dunya K Chorr Kaam Zara Aankh Tou Mila

Kia Woh Na Aj Aaengay Taaron K Sath Sath?
Tanhaieyon Ki Shaam Zara Aankh Tou Mila

Saqi Mujhe Bhi Chaheye ik jaam-e-Aarzoo
Kitney Lagein Gay Daam Zara Aankh Tou Mila

Yeh Jaam, Yeh Sabu, Yeh Tasawwur Ki Chaandni
Saaqi Kahan Madaam Zara Aankh Tou Mila

Ajaega Yaqeen-e-Khuda Sab Ko Yak Ba Yak
Lay K Khuda Ka Naam Zara Aankh Tou Mila

Pamaal Ho Na Jey Sitaron Ki Aabroo
Ay Mere Khush Kharaam Zara Aankh Tou Mila

Hein Raah-e-Kehkashaan Mein Azal Se Kharray Huey
Sagar Teray Ghulaam Zara Aankh Tou Mila..........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Thursday, 30 January 2014

Aaj Saqi Sharaab Rehne Do

Tishnagi K Azaab

    آج ساقی شراب رہنے دو
    تشنگی کےعذاب رہنے دو

    پونچھ ڈالو نہ آنکھ سے کاجل
    کچھ تو خنجر پہ آب رہنے دو

    تم سنواروں اپنی زلفوں کو
    میری حالت خراب رہنے دو

    چاند بادل میں اچھا لگتا ہے
    آدھے رُخ پہ نقاب رہنے دو

    اُن کے چہرے کی بات ہو جاۓ
    آج ذکرِ گلاب رہنے دو

    اُن کی چوکھٹ کو چوم لو محسن
    ...... باقی سارے ثواب رہنے دو

Aaj Saqi Sharaab Rehney Do
Tishnagi K Azaab Rehney Do

Poonch Daalo Na Aankh Se Kajal
Kuch Tou Khanjar Pe Aab Rehney Do

Tum Sanwaro’n Apni Zulfo’n Ko
Meri Halat Kharaab Rehney Do

Chaand Badal Mein Acha Lagta Hai
Apne Rukh Pe Naqaab Rehney Do

Un K Chehrey Ki Baat Ho Jaey
Aaj Zikr-e-Gulaab Rehney Do

Un Ki Chokhat Ko Choom Lo Mohsin
Baqi Saray Sawaab Rehney Do……….

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Wednesday, 29 January 2014

Meray Zawaal Se Pehle He Mujhko Chorr Gaya

Sitara Shanaas Woh

بچھڑ کے مجھ سے اگرچہ اداس وہ بھی تھا
پتا چلا کہ زمانہ شناس وہ بھی تھا

میرے زوال سے پہلے ہی مجھ کو چھوڑ گیا
غضب کا ستارہ شناس وہ بھی تھا ۔ ۔ ۔

Bicharr K Mujhse Agar-Chay Udas Woh Bhi Tha
Pata Chala Keh Zamana Shanaas Woh Bhi Tha

Meray Zawaal Se Pehle He Mujhko Chorr Gaya
Gazab Ka Sirtara Shanaas Woh Bhi Tha ……….

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Monday, 27 January 2014

Chalo Acha Hua Yeh Dhund Parrney Lagi


Dhund parrne Lagi

چلو اچھا ہوا یہ دھند پڑنے لگی
....ورنہ دور تک تکتی تھی انکی راہ ہماری آنکھیں      

Chalo Acha Huwa Yeh Dhund Parrne Lagi
    Warna Door Tak Takti Thi Unki Raah Hamari Aankhen...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Sunday, 26 January 2014

Mein Bhi Urroon Ga Aber K Shaano Pe Aaj Se

Tang Agaya Hoon

مَیں بھی اُڑوں گا ابر کے شانوں پہ آج سے
تنگ آ گیا ہُوں تشنہ زمیں کے مِزاج سے

مَیں نے سیاہ لفظ لِکھے دِل کی لَوح پر
چمکے گا درد اور بھی اِس اِمتزاج سے

انساں کی عافیت کے مسائل نہ چھیڑیئے
دُنیا اُلجھ رہی ہے ابھی تخت و تاج سے

گنگا تو بہہ رہی ہے مگر ہاتھ خُشک ہیں
بہتر ہے خُودکشی کا چلن اِس رِواج سے

تم بھی میرے مزاج کی لَے میں نہ ڈَھل سکے
..... .اُکتا گیا ہُوں میں بھی تمہارے سماج سے


Mein Bhi Urroon Ga Aber K Shaano Pe Aaj Se
Tang Aagaya Hoon Tishna Zameen K Mijaaz Se

Mein Ne Siyah Lafz Likhey Dil Ki Loh Par
Chamkey Ga Dard Aur Bhi Is Imtijaaz Se

Insaa’n Ki Aafiyat K  Masail Na Chairrye
Dunya Ulajh Rahi Hai Abhi Takht-O-Taaj Se

Ganga Tou Beh Rahi Hai Magar Hath Khushk Hein
Behtar Hai Khudkushi Ka Chalan Is Riwaaj Se

Tum Bhi Mere Mijaaz Ki Lay Mein Na Dhal Sakey
Ukta Gaya Hoon Mein Bhi Tumharey Samaaj Se …….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Wednesday, 22 January 2014

Dil Badi Mushkilon Se Basta Hai

Ashqi Ka Muqaam

مجھ پہ کیوں اسطرح سے ہنستا ہے
دل بڑی مشکلوں سے بستا  ہے

میرے گاؤں کے گھر ہیں سب کچے
ارے  بادل  کہاں برستا  ہے

جو کبھی لوٹ کر نہیں آئے
ان سے ملنے کو دل ترستا ہے

عاشقی کا مقام کیا ہوگا
جہاں الفت کا دام سستا ہے

تیرے جانے کے بعد جانے کیوں
ہر کوئی شخص مجھ پہ ہنستا ہے

میری منزل جسے سمجھ بیٹھے
وہ میری خواہشوں کا رستہ ہے

دوست کہتی ہے اسکو کیوں ماہ رخ
 ... ..جو تجھے ہر قدم پہ ڈستا ہے

Mujh Pe Kiun Is Tarha Se Hansta Hai
Dil Badi Mushkilon Se Basta Hai

Meray Gaao’n K Ghar Hein Sab Kachay
Aray Badal Kahan Barasta Hai

Jo Kabhi Lout Kar Nahi Aaey
Un Se Miloney Ko Dil Tarasta Hai

Aashqi Ka Muqaam Kia Hoga
Jahan ulfat Ka Daam Sasta Hai

Teray Janay K Baad Janay Kiun
Har Koi Shakhs Mujh Pe Hansta Hai

Meri Manzil Jisay Samjh Baithay
Woh Meri Khuwahishon Ka Rasta Hai

Dost Ketay Ho Us Ko Kiun Mahrukh
Jo Tujhe Har Qadam Pe Dasta Hai.....

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Tuesday, 21 January 2014

Kia Kaheiye Keh Ab Uski Sada Tak Nahi Aati

Sada Tak Nahi

کیا کہیے کہ اب اس کی صدا تک نہیں آتی
اونچی ہوں فصیلیں تو ہوا تک نہیں آتی

شاید ہی کوئی آسکے اس موڑ سے آگے
اس موڑ سے آگے تو قضا تک نہیں آتی

وہ گل نہ رہے نکبتِ گُل خاک ملے گی
یہ سوچ کے گلشن میں صبا تک نہیں آتی

اس شورِ تلاطم میں کوئی کس کو پکارے
کانوں میں یہاں اپنی صدا تک نہیں آتی

خوددار ہوں کیوں آؤں درِ ابلِ کرم پر
کھیتی کبھی خود چل کے گھٹا تک نہیں آتی

اس دشت میں قدموں کے نشاں ڈھونڈ رہے ہو
پیڑوں سے جہاں چھن کےضیا تک نہیں آتی

یا جاتے ہوئے مجھ سے لپٹ جاتی تھیں شاخیں
یا میرے بلانے سے صبا تک نہیں آتی

کیا خشک ہوا روشنیوں کا وہ سمندر
اب کوئی کرن آبلہ پا تک نہیں آتی

چھپ چھپ کے سدا جھانکتی ہیں خلوتِ گل میں
مہتاب کی کرنوں کو حیا تک نہیں آتی

یہ کون بتائے عدم آباد ہے کیسا
ٹوٹی ہوئی قبروں سےصدا تک نہیں آتی

بہتر ہے پلٹ جاؤ سیہ خانۂ غم سے
...اس سرد گُپھا میں تو ہوا تک نہیں آتی


Kia Kaheiye Keh Ab Uski Sada Tak Nahi Aati
Oonchi Hon Faseelein Tou Hawa Tak Nahi Aati

Shayad He Koi Aa Sakay Is Morr Se Aagay
Is Morr Se Aagay Tou Qaza Tak Nahi Aati

Woh Gul Na Rahey Nikbat-e-Gul Khaak Milay Gi
Yeh Soch K Gulshan Mein Saba Tak Nahi Aati

Is Shor-e-Talatum Mein Koi Kis Ko Pukarey
Kaano Mein Yahan Apni Sada Tak Nahi Aati

Khuddaar Hoon Kiun Aaon Dar-e-Abl-e-Karam Par
Khailti Kabhi Khud Chal Kar Ghata Tak Nahi Aati

Us Dasht Mein pairron K Nishaan Dhoond Rahey Ho
Pairron Se Jahan Chhan K Ziya Tak Nahi Aati

Ya Jati Hui Mujh Se Lipat Jati Thi Shakhein
Ya Meray Bulaney Se Saba Tak Nahi Aati

Kia Khushk Hua Sroshniyon Ka Woh Samandar
Ab Koi Kiran Aabla Paa Tak Nahi Aati

Chhup Chhup K Sada Jhankti Hai Khalwat-e-Gul Mein
Mehtaab Ki Kirno Ko Haya Tak Nahi Aati

Yeh Kon Bataey Adam Abaad Hai Kaisa
Tooti Hui Qabron Se Sada Tak Nahi Aati

Behtar Hai Palat Jao Siyah Khan-e-Gham Se
Is Ghupa Mein Tou Hawa Tak Nahi Aati…………..
  

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Sunday, 19 January 2014

Jab Tak Gham-e-Jahaan K Hawaley Huey Nahi

 
Hum Zindagi K
       
    جب تک غمِ جہاں کے حوالے ہوئے نہیں
    ہم زندگی کے جاننے والے ہوئے نہیں

    کہتا ہے آفتاب ذرا دیکھنا کہ ہم
    ڈوبے تھے گہری رات میں، کالے ہوئے نہیں

    چلتے ہو سینہ تان کے دھرتی پہ کس لیے
    تم آسماں تو سر پہ سنبھالے ہوئے نہیں

    انمول وہ گہر ہیں جہاں کی نگاہ میں
    دریا کی جو تہوں سے نکالے ہوئے نہیں

    طے کی ہے ہم نے صورتِ مہتاب راہِ شب
    طولِ سفر سے پاؤں میں چھالے ہوئے نہیں

    ڈس لیں تو ان کے زہر کا آسان ہے اُتار
    یہ سانپ آستین کے پالے ہوئے نہیں

    تیشے کا کام ریشۂ گُل سے لیا شکیبؔ
    ہم سے پہاڑ کاٹنے والے ہوئے نہیں

Jab Tak Gham-e-Jahaan K Hawaley Huey Nahi
Hum Zindagi K Janney Walay Huey Nahi

Kehta Hai Aftaab Zara Daikhna Keh Hum
Doobay Thay Gehri Raat Mein, Kalay Huey Nahi

Chaltey Ho Seena Taan K Dharti Pe Kis Liye
Tum Aasman Tou Sar Pe Sanbhaley Huey Nahi

Anmol Woh Gohar Hein Jahan Ki Nigaah Mein
Darya Ki Jo Tehon Se Nikaley Huey Nahi

Tay Ki Hai Hum Ne Soorat-e-Mehtab Rah-e-Shab
Tool-e-Safar Se Paaon Mein Chhaley Huey Nahi

Dus Lein tou In K Zehar ka Aasan Hai Utaar
Yeh Saanp Aasteen K paley Huey Nahi

Teeshay Ka Kaam Raisha-e-Gul Se Liya Shakeeb
Hum Se Pahaarr Kaatney Walay Huey Nahi...



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It