Monday, 30 September 2013

Subak Raftaar Lamho'n Ki Hadein Tarteeb Daita Hoon .. ..

Tarteeb Daita Hoon

    سبک رفتار لمحوں کی حدیں ترتیب دیتا ہوں
    سحر کے سانسیں گنتا ہوں شبیں ترتیب دیتا ہوں

    مرے یاروں کی فطرت میں یہ کیسا وصف شامل ہے
    وہی مجھ کو مٹاتے ہیں جنہیں ترتیب دیتا ہوں

    خزاں نے خشک پتوں میں صدائیں بانٹ رکھی ہیں
    میں ان کی سرسراہٹ سے دھنیں ترتیب دیتا ہوں

    تجھے سوچوں تو پہلو میں مچل جاتا ہے میرا دل
    سو دل پہ ہاتھ رکھ کر دھڑکنیں ترتیب دیتا ہوں

    بکھر جاتا ہے پسپا ہوکے جب لشکر ارادوں کا
    نئئ قوت سے پھر اپنی صفیں ترتیب دیتا ہوں

    میں پہناتا ہوں لفظوں کو معانی کی قبا ساگر
    غزل کہتا ہوں ان کی صورتیں ترتیب دیتا ہوں

Subuk Raftaar Lamhon Ki Hadein Tarteeb Daita Hoon
Sehar K Saans Ginta Hoon Shabein Tarteeb Daita Hoon

Mere Yaaron Ki Fitrat Mein Yeh Kesa Wasf Shamil Hai
Wohi Mujh Ko Mitatay Hein Jineh Tarteeb Daita Hoon

Khizaan Ne Khushk Patton Mein Sadaein Baant Rakhi Hein
Mein Unki Sar-sarahat Se Dhunei'n Tarteeb Daita Hoon

Tujhe Sochon Tou Pehlo Mein Machal Jata Hai Dil Mera
So Dil Par Haath Rakh Kar Dharkane Tarteeb Daita Hoon

Bikhar Jata Hai Paspa Ho K Jab Lashkar Iraadon Ka
Nai Qoowat Se Phir Apni Safein Tarteeb Daita Hoon

Mein Pehnata Hoon Lafzon Ko Muaafi Ki Qubaa Sagar
Ghazal Kehta Hoon Unki Sooratein Tarteeb Daita Hoon .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It - See more at: http://sajidpoetry.blogspot.com/2013/09/mein-apne-aap-mein-tujhko-samo-loon.html#sthash.SUi66O3B.dpuf
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It - See more at: http://sajidpoetry.blogspot.com/2013/09/mein-apne-aap-mein-tujhko-samo-loon.html#sthash.SUi66O3B.dpuf

Yeh Hijr K Hathon Mein Lakeeron Ki Tarha Hai

Sunsaan Jazeeron Ki


‫یہ ھجر ،کہ ھاتھوں میں لکیروں کی طرح ھے،
اچھا ھے میرا دل بھی اسیروں کی طرح ھے

اک میں ھوں ھواؤں کی صداؤں کا مسافر،
اک تو ھے جو سوچوں پہ سفیروں کی طرح ھے

ھر شخص ھے نفرت کے تقاضوں کا پجاری
مدت سے محبت بھی فقیروں کی طرح ھے

تو دل میں بسا ھے ! یہ عجب ھے کہ میرا گھر
اجڑے ھوئے بےربط جزیروں کی طرح ھے

دیکھی ھے وفا تائب گلیوں میں شکستہ
 .. .. ویسے تو تیرا شہر امیروں کی طرح ھے

Yeh Hijr K Hathon Mein Lakeeron Ki Tarha Hai
Acha Hai Mera Dil Bhi Aseeron Ki Tarha Hai

Ik Mein Hoon Hawao'n Ki Sadao'n ka Musafir
Ik Tu Hai Jo Sochon Pay Safeeron Ki Tarha Hai

Har Shakhs Hai Nafrat K Taqazon Ka Pujari
Muddat Se Mohabbat Bhi Faqeeron Ki Tarha Hai

Tu Dil Mein Basa Hai Yeh Ajab Hai K Mera Ghar
Ujray Huey Be-Rabt Jazeeron Ki Tarha Hai

Dekhi Hai Wafa Taaib Galyon Mein Shikasta
Waisay Tou Tera Shehar Ameeron Ki Tarha Hai ..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Neend Tou Khuwab Hogai Shayad .. ..

Aik Muddat Se

نیند تو خواب ہو گئی شاید
جنس نایاب ہو گئی شاید

اپنے گھر کی طرح وہ لڑکی بھی
نذرِ سیلاب ہو گئی شاید

تجھ کو سوچوں تو روشنی دیکھوں
یاد ، مہتاب ہو گئی شاید

ایک مدت سے آنکھ روئی نہیں
جھیل پایاب ہو گئی شاید

ہجر کے پانیوں میں عشق کی ناؤ
کہیں غرقاب ہو گئی شاید

چند لوگوں کی دسترس میں ہے
زیست کم خواب ہو گئی شاید


Neend Tou Khuwab Hogai Shayad
Jins Nayaab Hogai Shayad

Apne Ghar Ki Tarha Woh Larki Bhi
Nazr-e-Sailaab Hogai Shayad

Tujhko Sochon Tou Roshni Dekhon
Yaad , Mehtaab Hogai Shayad

Aik Muddat Se Aankh Roi Nahi
Jheel Payaab Hogai Shayad

Hijr K Paniyon Mein Ishq Ki Naao
Kaheen Garqaab Hogai Shayad

Chund Logon Ki Dastaras Mein Hai
Zeest Kam-Khuwab Hogai Shayad.. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It






Mein Such Kahon Gi Aur Phir Bhi Haar Jaon Gi .. ..

Lajwaab Karde Ga


دھنک دھنک مری پوروں کے خواب کر دے گا
وہ لمس میرے بدن کو گلاب کر دے گا

قبائے جسم کے ہر تار سے گزرتا ہُوا
کرن کا پیار مجھے آفتاب کر دے گا

جنوں پسند ہے دل اور تجھ تک آنے میں
بدن کو ناؤ، لہُو کو چناب کر دے گا

میں سچ کہوں گی مگر پھر بھی ہار جاؤں گی
وہ جھوٹ بولے گا، اور لا جواب کر دے گا

اَنا پرست ہے اِتنا کہ بات سے پہلے
وہ اُٹھ کے بند مری ہر کتاب کر دے گا

سکوتِ شہرِ سخن میں وہ پھُول سا لہجہ
سماعتوں کی فضا خواب خواب کر دے گا

اسی طرح سے اگر چاہتا رہا پیہم
سخن وری میں مجھے انتخاب کر دے گا

مری طرح سے کوئی ہے جو زندگی ا پنی
 .. .. تُمھاری یاد کے نام اِنتساب کر دے گا


Dhanak Dhanak Meri Pooron K Khuwab Karde Ga
Woh Lums Mere Badan Ko Gulaab Karde Ga

Quba-e-Jism K Har Taar Se Guzarta Hua
Kiran Ka Piyar Mujhe Aftaab Karde Ga

Junoo Pasand Hai Dil Aur Tujh Tak Aanay Mein
Badan Ko Naao , Lahoo Ko Chanaab Karde Ga

Mein Such Kahongi Magar Phir Bhi Haar Jaongi
Woh Jhoot Bolay Ga, Aur Lajawaab Karde Ga

Anaa Parast Hai Itna K Baat Say Pehlay
Woh Uth K Band Meri Har Kitaab Karde Ga

Sakoot-e-Shehr-e-Sukhan Mein Woh Phool Sa Lehja
Sama'aton Ki Fiza Khuwab Khuwab Karde Ga

Isi Tarha Se Agar Chahta Raha Paiham
Sukhan Vari Mein Mujhe Intakhaab Karde Ga

Meri Tarha Se Koi Hai Jo Zindagi Apni
Tumhari Yaad K Naam Intasaab Karde Ga .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Saturday, 28 September 2013

Us Ne Bhi Bhool Janay Ka Wada Nahi Kia .. ..

Lotnay Ka Irada

ہم نے ہی لوٹنے کا ارادہ نہیں کیا
اس نے بھی بھول جانے کا وعدہ نہیں کیا

دکھ اوڑھتے نہیں کبھی جشنِ طرب میں ہم
ملبوس دل کو تن کا لبادہ نہیں کیا

جو غم ملا ہے بوجھ اٹھایا ہے اس کا خود
سر زیرِ بارِ ساغر و بادہ نہیں کیا

کارِ جہاں ہمیں بھی بہت تھے سفر کی شام
اس نے بھی التفات زیادہ نہیں کیا

آمد پہ تیری عطر و چراغ و سبو نہ ہوں
.. .. اتنا بھی بود و باش کو سادہ نہیں کیا


Hum Ne He Lotney Ka Irada Nahi Kia
Us Ne Bhi Bhool Janey Ka Wada Nahi Kia

Dukh Orhtay Nahi Kabhi Jashan-e Tarb Mein Hum
Malboos-e- Dil Ko Tann Ka Libadah Nahi Kia

Jo Gham Mila Ha Bojh Uthaya Ha Us Ka Khud
Sr Zair-e- Bar-e- Saghar-o-Baadah Nahi Kia

Kaar-e Jahan Hame Bhi Bohat Thay Safar Ki Sham
Us Ne Bhi Iltafaat Ziada Nahi Kia

Aamad Pe Teri Atr-o- Charagh-o-Saboo Na Hon
Itna Bhi Bod-o- Baash Ko Saada Nahi Kia.. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Woh Jab Se Shehr-e-Kharabaat Ko Rawana Hua .. ..

Rawana Hua

وہ جب سے شہر خرابات کو روانہ ہُوا
براہِ راست مُلاقات کو زمانہ ہُوا

وہ شہر چھوڑ کے جانا تو کب سے چاہتا تھا
یہ نوکری کا بُلاوا تو اِک بہانہ ہوا

خُدا کرے تری آنکھیں ہمیشہ ہنستی رہیں
یہ آنکھیں جن کو کبھی دُکھ کا حوصلہ نہ ہُوا

کنارِ صحن چمن سبز بیل کے نیچے
وہ روز صبح کا مِلنا تو اَب فسانہ ہُوا

میں سوچتی ہوں کہ مُجھ میں کمی تھی کِس شے کی
کہ سب کا ہوکے رہا وہ، بس اِک مرا نہ ہُوا

کِسے بُلاتی ہیں آنگن کی چمپئی شامیں
کہ وہ اَب اپنے نئے گھر میں بھی پرانا ہُوا

دھنک کے رنگ میں ساری تو رنگ لی میں نے
اور اب یہ دُکھ ، کہ پہن کر کِسے دِکھانا ہُوا

میں اپنے کانوں میں بیلے کے پھُول کیوں پہنوں
 .. .. زبانِ رنگ سے کِس کو مُجھے بُلانا ہُوا

Woh Jab Se Sheher-e-Karabaat Ko Rawaana Hua
Barahe’raast Mulaqaat Ko Zamana Hua

Woh Shehar Chorr K Jaana Tou Kab Se Chahta Tha
Yeh Naukri Ka Bulawaa Tou Ik Bahaana Hua

Khuda Karey Teri Aankhain Hamesha Hansti Rahein
Yeh Aankhain Jin Ko Kabhi Dukh Ka Hosla Na Hua

Kinaar-e-Sehan Chaman Sabz Bail K Neechay
Woh Roz Subah Ka Milna Tou Ab Fasaana Hua

Main Sochti Hoon K Mujh Mein Kami Thi Kis Shay Ki
K Sab Ka Ho K Raha Woh, Bas Ik Mera Na Hua

Kisay Bulati Hain Aangan Ki Champayi Shaamein
K Woh Ab Apne Naye Ghar Mein Bhi Purana Hua

Dhanak K Rang Main Saari Tou Rang Li Hain Mene
Aur Ab Yeh Dukh, K Pehan Kar Kise Dikhana Hua

Main Apne Kaano’n Main Bailay K Phool Q Pehnoon
Zabaan-e-Rung Se Kis Ko Mujhe Bulana Hua .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Awwal Awwal Ki Dosti Hai Abhi .. ..

Dosti Hai Abhi

اول  اول  کی  دوستی  ہے ابھی
اک غزل ہے کہ ہو رہی ہےابھی

میں بہی شہر وفا میں نو وارد
وہ بہی رک رک کےچل رہی ہےابھی

میں بہی ایسا کہاں کا زود شناس
وہ بھی لگتا ھے سوچتی ہےابھی

دل کی وارفتگی ہے اپنی جگہ
پہربہی کچھ احتیاط سی ہےابھی

گرچہ پہلا سا اجتناب نہیں
پہربہی کم کم سپردگی ہےابھی

کیسا موسم ہے کچھ نہیں کہلتا
بوندا باندی بھی دھوپ بھی ہےابھی

خود کلامی میں کب یہ نشہ تھا
جس طرح روبرو کوئی ہےابھی

قربتیں لاکھ خوبصورت ہوں
دوریوں میں بہی دلکشی ہےابھی

فصل گل میں بہار پہلا گلاب
کس کی زلفوں میں ٹانکتی ہےابھی

رات کس ماہ وش کی چاہت میں
یہ شبستاں سجا رہی ہےابھی

میں کسی وادی خیال میں تھا
برف سی دل پہ گررہی ہےابھی

میں توسمجھا تھا بھرچکے سب زخم
داغ شاید کوئی کوئی ہے ابھی

دور دیسوں سےکالےکوسوں سے
کوئی آواز آرہی ہے ابھی

زندگی کوئے نامرادی سے
کس کو مڑ مڑ کےدیکھتی ہےابھی

اس قدر کھچ گئی ہے جاں کی کماں
ایسا لگتا ہے ٹوٹتی  ہے ابھی

ایسا لگتا ہےخلوت جاں میں
وہ جواک شخص تھا، وہی ہےابھی

مدتیں  ہو گئیں  فراز مگر
 .. ..وہ جو دیوانگی سی تہی، ہےابھی

Awal Awal Ki Dosti Hai Abhi
Aik Ghazal Hai K Ho Rahi Hai Abhi

Main Bhi Shehr-E-Wafa Mai Nowarid
Woh Bhi Ruk Ruk K Chal Rahi Hai Abhi

Main Bhi Aisa Kahan Ka Zod-O-Shanas
Woh Bhi Lagta Hai Sochti Hai Abhi

Dil Ki Waruftagi Hai Apni Jaga
Phir Bhi Kuch Ehtiyat Si Hai Abhi

Gar Chey Pehla Sa Ijtinab Nahi
Phir Bhi Kam Kam Supurdigi Hai Abhi

Kaisa Mausam Hai Kuch Nahi Khilta
Boonda Baandi Bhi Dhoop Bhi Hai Abhi

Khud Kalami Main Kab Yeh Nasha Tha
Jis Tarha Roobaru Koi Hai Abhi

Qurbatien Laakh Khoobsoorat Hoon
Dooriyon Main Bhi Dilkashi Hai Abhi

Fasl-E-Gul Main Bahaar Pehla Gulab
Kis Ki Zulfon Main Taankti Hai Abhi

Raat Kis Maahwish Ki Chahat Main
Shabistaan Saja Rahi Hai Abhi

Main Bhi Kisi Wadiye Khayal Main Tha
Baraf Si Dil Pe Gir Rahi Hai Abhi

Main To Samjha Tha Bhar Chuke Sab Zakhm
Daag Shayad Koi Koi Hai Abhi

Door Daiso’n Se  Kaale Koson Se
Koi Awaaz Aa Rahi Hai Abhi

Zindagi Kuey Na Muradi Se
Kis Ko Murr Murr K Dekhti Hai Abhi

Is Qadar Khich Gai Hai Jaan K Kamaa’n
Aisa Lagta Hai Toot’ti Hai Abhi

Aisa Lagat Hai Khilwat-E-Jaan Main
Woh Jo Aik Shakhs Tha Wohi Hai Abhi

Muddatein Ho Gai Faraz Magar
Woh Jo Deewangi Thi Ke Hai Abhi.. ..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Friday, 27 September 2013

Tum Aik Din Tou Miltay, Do Din Ki Zindagi Mein...!!

Lamhay Musibaton K

کچھ تو کم ہوتے یہ لمحے مصیبتوں کے
تم ایک دن تو ملتے دو دن کی زندگی میں۔۔

Kuch Tau Kam Hotay Ye Lamhay Museebaton Kay
 Tum Aik Din Tou Miltay, Do Din Ki Zindagi Mein...!!

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It