Sunday, 31 March 2013

Marne Waalon Ko Ro Raha Hai Kia ?


Be-Basi Dekh Jeenay

مرنے والوں کو رو رہا ہے کیا
بیکسی دیکھ جینے والوں کی

Marne Waalon Ko Ro Raha Hai Kia ?
  Be-Basi Daikh Jeenay Waalon Ki…..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Kabhi Yaaden Kabhi Sapne Suhane Bhaij Deta Hai


Sapne Suhane Bhaij

کبھی یادیں کبھی سپنے سہانے بھیج دیتا ھے
مجھے اکثر وہ یادوں کے خزانے بھیج دیتا ھے

میں جب گزرے دنوں کی تلخیوں کو بھول جاتا ھوں
مجھے پھر سے کوئی بیتے زمانے بھیج دیتا ھے

کبھی قسمیں کبھی عہد وفا کو حوصلہ دے کر
ہمیں وہ زندہ رھنے کے بہانے بھیج دیتا ھے

Kabhi Yaaden Kabhi Sapne Suhane Bhaij Deta Hai 
Mujhe Aksar Wo Yaadon Ke Khazane Bhaij Deta Hai


Mein Jab Guzre Dino Ki Talkhiyon Ko Bhool Jata Hoon 
Mujhe Phir  Se Koi Beetay Zamane Bhaij Deta Hai


Kabhi Qasmein Kabhi Ehd-e-Wafa Ko Hosla De Kar 
Hamein Wo Zinda Rehne Ke Bahane Bhaij Deta Hai.. 


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Hukum Tera Hai Tou Ta'ameel Kiye Detey Hen


Zindagi Hijr Men

حُکم تیرا ھے تو تعمیل کیۓ دیتے ہیں
زندگی ہجر میں تحلیل کیۓ دیتے

تُو مرے وصل کی خواہش پے بگڑتا کیوں ھے
راستہ ہی ھے ،چلو تبدیل کیۓ دیتے ہیں ہیں

آج سب اشکوں کو آنکھوں کے کنارے پے بُلاؤ
آج اِس ہجر کی تکمیل کیۓ دیتے ہیں

ہم جو ہنستے ہوۓ اچھے نہیں لگتے تمکو
حکم کر ؟آنکھ ابھی جھیل کیۓ دیتے ھیں

Hukum Tera Hai Tou Tameel Kiye Detay Hain
Zindagi Hijr Main Tehleel Kiye Detay Hain

Tu Meri Wasal Ki Khuwahish Per Bigarta Kiun Hai?
Raasta He Hai Chalo Tabdeel Kiye Detay Hain

Aaj Sub Ashkon Ko Aankhon K Kinare Pe Bulao
Aaj  Is  Hijr  Ki  Takmeel  Kiye  Detay  Hain

Hum Jo Hanste Huay Ache Nahi Lagte Tum Ko
Hukum Ker ? Aankh Abhi Jheel Kiye Detay Hain




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Mujh Se Mukhlis Tha Na Waqif Mere Jazbaat Se Tha


Mere Jazbaat Se

مُجھ سے مُخلص تھا نہ واقف میرے جزبات سے تھا
اُس کا رِشتہ تو فقط اپنے مفادات سے تھا

اب جو بچھڑا ہے تو کیا روئیں جُدائی پہ تیری
یہ اندیشہ تو ہمیں پہلی ملاقات سے تھا

دِل کے بجھنے کا ہواوں سے گِلہ کیا کروں
یہ دِیّا نَزا کے عالم میں تو کَل رات سے تھا

مرکز شہر میں رھنے پہ مضر تھی خلقت
اور میں وابستہ ترے دل کے مضافات سے تھا

میں خواابوں کا مکیں اور تعلق میرا
تیرے ناطے کبھی خوابوں کے محلات سے  تھا

لَب کُشائی پر کھلا اُس کے سُخن کا اِفلاس
کتنا آراستہ وہ اطلاس و بنات سے تھا



Mujh Se Mukhlis Tha Na Waqif Mere Jazbaat Se Tha
Us Ka Rishta Tou Faqat Apne Mafadaat Se Tha

Ab Jo Bichra Hai Tou Kia Rooien Judai Pe Teri
Ye Andaisha Tou Hamien Pehli Mulaqaat Se Tha

Dil K Bujhne Ka Hawaoon Se Gila Kia Karna
Ye Diya  Nazaa K Aalam Mein Tou Kal Raat Se Tha

Markaz- e-Shehar Mein Rehne Pe Muser Thi Khalqat
Aur Mein Wabasta Tere Dil K Muzafaat Se Tha

Mein Kharabon Ka Makeen  Aur Ta’alluq Mera
Tery Naate Kabhi Khawaboon K Mehlaat Se Tha

Lab Kushaie Par Khula Usk Sukhan Ka Ikhlaas
Kitna Aarasta Woh Atlaas Wa Banaat Se Tha....





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Boondein Giree'n Tou Aankh Se Aansoo Bhi Beh Gaey



Aansoo Bhi Beh


بوندیں گریں تو آنکھ سے آنسو بھی بہ گۓ
بارش کا اس کی یاد سے رشتہ ضرور ہے

Boondein Giree’n Tou  Aankh Se Aansoo Bhi Beh Gaey
Baarish Ka Uski Yaad Se Rishta Zaroor Hai………



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Woh Sarapa Samne Hai...



Romantic Poetry

وہ  سراپا سامنے ہے , استعارے مسترد
چاند, جگنو, پھول, خوشبو اور ستارے مسترد

Woh Sarapa Samne Hai, Ista’aray Mustarad
Chaand , Jugnu, Phool, Khushbu Or Sitare Mustarad..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Us Ne Jab Jab Bhi Mujhe Dil Se Pukara Mohsin

Dil Se Pukara
 

    اس نے جب جب بھی مجھے دل سے پکارا محسن
    میں نے تب تب یہ بتایا کے تمہارا محسن

    لوگ صدیوں کے خطائوں پہ بھی خوش بستے ہیں
    ہم کو لمحوں کی وفاؤں نے اجاڑا محسن

    ہو گیا جب یہ یقین اب وہ نہیں آئے گا
    آنسو اور غم نے دیا دل کو سہارا محسن

    وہ تھا جب پاس تو جینے کو بھی دل کرتا تھا
    اب تو پل بھر بھی نہیں ہوتا گزارا محسن

    اسکو پانا تو مقدر کی لکیروں میں نہیں
    اسکو کھونا بھی کریں کیسے گوارہ محسن

Us Ne Jab Jab Bhi Mujhe Dil Se Pukara Mohsin
Main Ne Tab Tab Ye Bataya K Tumhara Mohsin

Log Sadiyon Ki Khataon Pe Bhi Khush Baste Hain
Hum Ko Lamhon Ki Wafaon Ne Ujarra Mohsin

Ho Gaya Jab Ye Yaqin Ab Woh Nahi Aaye Ga
Aansoo Aur Gham Ne Diya Dil Ko Sahara Mohsin

Woh Tha Jab Pas Tou Jeenay Ko Bhi Dil Karta Tha
Ab Tou Pal Bhar Bhi Nahi Hota Guzara Mohsin

Us Ko Pana Tou Muqaddar Ki Lakeron Mein Nahi
Us Ka Khona Bhi Karien Kesey Gavara Mohsin….. 

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Kabhi Dekha Hai Andhey Ko

Andhe Ko Kisi

کبھی  دیکھا ہے اندھے کو کسی کا ہاتھ پکڑ کر چلتے
میں نے محبت میں  تم پہ یوں  بھروسہ کیا تھا

    Kabhi Dekha Hai Andhey Ko Kisi Ka Hath Pakar Kar Chalte
    Men Ne Mohabbat Men Tum Pay Yun Bharosa Kia Tha..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Sookhay Huey Patton Ko Girane Ki Hawas Men...

Aandhi Ne Giraey Shajar



سُوکھے ہوئے پتوں کو اُڑانے کی ہوس میں
آندھی نے گِرائے کئی سر سبز شجر بھی

محسن یونہی بدنام ہوا  شام کا ملبوس
حالانکہ لہو رنگ تھا  دامانِ سحر بھی

Sookhay Huey Patton Ko Girane Ki Hawas Men
Aandhi Ne Giraey Kai Sar-Sabz Shajar Bhi

Mohsin Yun He Badnaam Hua Sham Ka Malboos
Halaan’K Lahoo Rung Tha Damaan-e-Sehar Bhi..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Saturday, 30 March 2013

Apne Ehsaas K Sab Rung Utar Jane Do


Charagon Ko Jalao

    اپنے احساس کے سب رنگ اتر جانے دو
    میری امید میرے خواب بکھر جانے دو

    اپنے آنگن میں چراغوں کو جلائو نہ ابھی
    میرے آنگن میں سیاہ رات اتر جانے دو

    بڑی مشکل سےملا ہےمجھےمیرےگھرکاپتہ
    راستو ! اب تو نہ الجھو۔۔۔مجھے گھر جانے دو

    جن کے آنے کا بہت شور ہوا تھا ہر سو
    انہی لمحوں کو چپ چاپ گزر جانے دو

    میری بربادی کا الزام نہ آئے تم پر
    میرے حالات کو کچھ اور بگڑ جانے دو

Apne  Ehsaas  K Sab  Rung  Utar  Jane  Do
Meri Umeed Mere Khuwaab Bikhar Jane Do

Apne Aangan Men Charagon Ko Jalao Na Abhi
Mere  Aangan  Men  Siyah  Raat Utar Jane Do

Badi Mushkil Se Mila Hai Mujhe Mere Ghar Ka Pata
Raasto  Ab  Tou  Na  Uljhoo,  Mujhe Ghar Jane Do

Jin K Aane Ka Bohat Shor Hua Tha Har Soo
In He Lamhon Ko Chup-Chaap Guzar Jane Do

Meri Barbaadi Ka Ilzaam Na Aaey Tum Par
Mere Halaat  Ko  Kuch  Aur Bigarr Jane Do…..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Baaghi Men Aadmi Se, Na Munkir Khuda Ka Tha..



Gum Sum Khara

باغی میں آدمی سے, نہ مُنکر خدا کا تھا
درپیش مسئلہ مری اپنی اَنا کا تھا

گُم صُم کھڑا تھا ایک شجر دشتِ خوف میں
شاید وہ منتظر کسی اندھی ہَوا کا تھا

اپنے دُھویں کو چھوڑ گیا آسمان پر
بجھتے ہوئے دیے میں غرور انتہا کا تھا

دیکھا تو وہ حسین لگا سارے شہر میں
سوچا تو وہ ذہین بھی ظالم بلا کا تھا

لہرا رہا تھا کل جو سرِ شاخِ بے لباس
دامن کا تار تھا کہ وہ پرچم صبا کا تھا؟

ورنہ مکانِ ِتیرہ کہاں‘ چاندنی کہاں؟
اُس دستِ بے چراغ میں شعلہ حنا کا تھا

میں خوش ہُوا کہ لوگ اکٹھے ہیں شہر کے
باہر گلی میں شور تھا لیکن ہوا کا تھا

اُس کو غلافِ روح میں رکھّا سنبھال کر
محسن وہ زخم بھی تو کسی آشنا کا تھا
Baaghi Men Aadmi Se, Na Munkir Khuda Ka Tha
Dar-Paish  Mus’ala  Meri  Apni  Ana  Ka  Tha

Gum-Sum Khara Tha Aik Shajar Dash-e-Khof Men
Shayad Woh Muntazir Kisi Andhi Hawa Ka Tha

Apne Dhooein Ko Chorr Gaya Aasmaan Par
Bujhte Huey Diye Men Guroor Inteha Ka Tha

Dekha Tou Woh Haseen Laga Sarey Shehar Men
Socha Tou Woh Zaheen  Bhi Zaalim Bala Ka Tha

Lehra Raha Tha Kal Jo Sar-e-Shaakh Be-Libaas
Daaman Ka taar Tha K Woh Parchamj Saba Ka Tha?

Warna Makaan Tera Kahan, Chaandni Kahan?
Us Dast-e-Be-Charagh Men Shola Hina Ka Tha

Men Khush Hua K Log Ikthay Hen Shehar K
Bahar Gali Men Shor Tha, Lekin Hawa Ka Tha

Us Ko Gilaf-e-Rooh Men rakh Sanbhaal Kar
Mohsin Woh Zakhm Bhi Tou Kisi Aashna Ka Tha..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Jugnoo, Gohar, Charagh, Ujaley Tou De Gaya...


Ujaley Tou De Gaya

جگنو، گُہر، چراغ، اجالے تو دے گیا
وہ خود کو ڈھونڈنے کے حوالے تو دے گیا

اب اس سے بڑھ کے کیا ہو وراثت فقیر کی
بچوں کو اپنی بھیک کے پیالے تو دے گیا

اب میری سوچ سائے کی صورت ہے اُس کے گرد
میں بجھ کے اپنے چاند کو ہالے تو دے گیا

شاید کہ فصلِ سنگ زنی کچھ قریب ہے
وہ کھیلنے کو برف کے گالے تو دے گیا

اہلِ طلب پہ اُس کے لیے فرض ہے دُعا
خیرات میں وہ چند نوالے تو دے گیا

محسن اُسے قبا کی ضرورت نہ تھی مگر
دُنیا کو روز و شب کے دوشالے تو دے گیا

Jugnoo, Gohar, Charaagh, Ujaley Tou De Gaya
Woh Khud Ko Dhoondne K Hawaley Tou De Gaya

Ab Is Se Barh Kar Kia Ho,  Virasat Faqeer Ki
Bachon Ko Apni Bheek K Piyaley Tou De Gaya

Ab Meri Soch Saey Ki Soorat Hai , Us K Gird
Men Bujh K Apne Chaand Ko Haaley Tou De Gaya

Shayad K Fasl-e-Sung-e-Zani Kuch Qareeb Hai
Woh Khailney Ko Barf K Haaley Tou De Gaya

Ehl-e-Talab  Pe  Us  K  Liye  Farz  Hai  Duaa
Khairaat Men Woh Chund Niwaley Tou De Gaya

Mohsin  Usay  Quba Ki  Zaroorat Na Thi  Magar
Dunya Ko Roz-o-Shab K Do-Shaaley Tou De Gaya…


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
 



Aaghaz-e-Ishq Jab Tera Anjaam Aaega....

Iqraar Ki Taraf

آغاز عشق جب تیرا انجام آئے گا
کیا کیا نا اپنی ذات پر الزام آئے گا

کیسی اذیتوں سے گزر جائے گا یہ دل
کس دکھ سے میرے لب پے تیرا نام آئے گا

جا تو رہا ہے دل تیرے اقرار کی طرف
میں جانتا ہوں لوٹ کے ناکام آئے گا

ہونٹوں کا لمس دے کے مجھ اس نے یہ کہا
لے جا اسے سفر میں تیرے کام آئے گا

جب مستحب ہوگا دعاؤں کا سلسلہ
اک اور دشت حجر میرے نام آئے گا

Aaghaz-e-Ishq, Jab Tera Ajaam Aaega
Kia Kia Na Apni Zaat Pe Ilzaam Aaega

Kesi Aziyaton Se Guzar Jaega Yeh Dil
Kis Dukh Se Mere Lab Pe Tera Naam Aaega

Ja Tou Raha Hai Dil Tere Iqraar Ki Taraf
Men Janta Hoon Lout K Nakaam Aaega

Honton Ka Lums De K Mujhe Us Ne Yeh kaha
Lay ja Isay Safar  Men Tere Kaam Aaega

Jab Mustajib Hoga Duaaon Ka Silsila
Ik Aur Dash-e-Hijr  Mere Naam Aaega….

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Zindagi Dard Bhi, Dawa Bhi Thi


Dawa Bhi Thi

زندگی درد بھی ، دوا بھی تھی
ہمسفر بھی گریز پا بھی تھی

کچھ تو تھے دوست بھی وفا دشمن
کچھ میری آنکھ میں حیا بھی تھی

دن کا اپنا بھی شور تھا لیکن
شب کی آواز بھی سدا بھی تھی

عشق نے ہم کو غالب دان کیا
یہی تحفہ ، یہی سزا بھی تھی

گردباد وفا سے پہلے تک
سر پہ خیمہ بھی تھا ردا بھی تھی

ماں کی آنکھیں چراغ تھیں جس میں
میرے ہمراہ وہ دعا بھی تھی

کچھ تو تھی رہگزر میں شمع طلب
اور کچھ تیز وہ ہوا بھی تھی

بے وفا تو وہ خیر تھا امجد
لیکن اس میں کہیں وفا بھی تھی

Zindagi Dard Bhi Dawa Bhi Thi
Humsafar Bhi Gharaiz-Paa Bhi Thi

Kuch Tou Thay Dost Bhi Wafa Dushman
Kuch  Meri  Aankh Men Haya  Bhi Thi

Din Ka Apna Bhi Shor Tha Lekin
Shab Ki Aawaaz Bhi Sada Bhi Thi

Ishq Ne Hum Ko Ghalib Daan Kia
Yehi Tohfa , Yehi  Saza  Bhi  thi

Ghard-e-Baad  Wafa Se Pehle Tak
Sar Pay Khaima Bhi Tha, Rida Bhi Thi

Maa Ki Aankhen Charagh Thi Jis Men
Mere Hum-Raah Woh Duaa Bhi Thi

Kuch Tou Thi Rehguzar Men Shamma Talab
Aur Kuch Taiz Woh Hawa Bhi Thi

Bewafa Tou Woh Khair Tha Amjad
Lekin Us Men Kaheen Wafa Bhi Thi….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It